وزیراعظم عمران خان کے بھانجے حسان نیازی بھی وکلا کے اجتجاج میں شامل

پی آئی سی پر حملے کو 4 روز گزر گئے، وزیراعظم کے بھانجے حسان نیازی گرفتار نہ ہو سکے

لاہور(بول پاکستان رپورٹ)پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر حملے میں پیش پیش رہنے والے حسان نیازی چار روز گزرنے کے باوجود گرفتار نہ ہوسکے۔ نجی ٹی وی چینل کے مطابق پولیس کئی روز سے وزیراعظم کے بھانجے حسان نیازی کی گرفتاری کیلئے چھاپے ماررہی ہے تاہم تاحال حسان نیازی کا کچھ پتہ نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں: 4 سالہ معصوم بچی کو زیادتی کے بعد قتل کرنے والا درندہ پکڑا گیا، یہ بھی مقتولہ کا قریبی رشتہ دار نکلا

دوسری جانب نیو نیوز نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ ہسپتال انتطامیہ نے چار لوگوں کے ڈیتھ سرٹیفکیٹ جاری کئے ہیں جبکہ وکلااور دیگر افراد تین ہلاکتوں کا ذکر کررہے ہیں۔ٹی وی چینل کے مطابق ہلاکتوں کی کل تعداد چار ہے کیونکہ چار ڈیتھ سرٹیفکٹ جاری ہو چکے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: نیب کو چیئرمین ایف بی آر کے خلاف درخواست دیئے جانے کا انکشاف، نیا تنازعہ کھڑا ہو گیا

واضح رہے 11 دسمبر کے روز وکلا نے پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر دھاوا بول دیا تھا جن میں وزیراعظم عمران خان کے بھانجے اور پی ٹی آئی حکومت کے سخت ناقد حفیظ اللہ نیازی کے صاحبزادے حسان نیازی بھی شامل تھے۔ اس موقع پر وکلا اور ڈاکٹرز نے ایک دوسرے پر پتھر برسائے جبکہ وکلا نے ایمرجنسی کے شیشے توڑ دیئے اور ہسپتال کی کئی قیمتی مشینوں اور باہر کھڑی گاڑیوں کو بھی توڑ پھوڑ ڈالا اور ڈاکٹروں اور طبی عملے کو تشدد کا نشانہ بنایا۔

یہ بھی پڑھیں: بھارتی وزیراعظم نریندر مودی گنگا کی سیر کرتے منہ کے بل گر گئے، ویڈیو سامنے آ گئی

اپنا تبصرہ بھیجیں