queen emma

برطانوی تاریخ کی طاقتور ترین ملکہ ایما ، مگر ناجائز تعلقات کا الزام لگا تو اسے بھی دہکتے لوہے سے گزرنا پڑا

لندن(بول پاکستان رپورٹ) برطانیہ میں کیتھڈرل کے خفیہ خزانے کی تلاش کے دوران ماہرین کو 11ویں صدی عیسوی کی ایک برطانوی ملکہ کی باقیات ملی ہیں جسے اس کی زندگی میں اپنی پاکبازی ثابت کرنے کے لیے سرخ دہکتے ہوئے لوہے کے اوپر سے گزارا گیا تھا۔ میل آن لائن کے مطابق اس ملکہ کا نام ایما تھا، جس کی باقیات ورچیسٹر کیتھڈرل میں پڑے 6صندوقوں سے برآمد ہوئی ہیں۔ ملکہ ایما نے دو اینگلو سیکسن بادشاہوں سے شادیاں کیں تھیں۔ پہلے اس کی شادی بادشاہ ایتھیلریڈ سے ہوئی اور اس کی موت کے بعد جب کینیوٹ (Canute)بادشاہ بنا تو ملکہ ایما کی اس کے ساتھ شادی ہو گئی۔

یہ بھی پڑھیں: بیوی سے لڑائی، شوہر نے اس کے جسم کے پوشیدہ حصے میں ایسی چیز ڈال دی کہ سن کر ہی روح کانپ اُٹھے

ملکہ ایما اگرچہ برطانوی تاریخ کی طاقتور ترین ملکاؤں میں شمار ہوتی ہیں۔ وہ 985ء میں پیدا ہوئیں اور1052ء میں ان کی موت واقع ہوئی۔ جب ملکہ ایما کا بیٹا ایڈورڈ دی کنفیسر (Edward the Confessor)بادشاہ بنا تو ملکہ پر ونچیسٹر کے پادری کے ساتھ جنسی تعلقات کا الزام عائد کر دیا گیا اوراس کے بیٹے بادشاہ ایڈورڈ نے اسے آگ کی طرح سرخ کیے ہوئے لوہے کے اوپر سے ننگے پاؤں گزر کر اپنی معصومیت ثابت کرنے کا حکم دے دیا۔

یہ بھی پڑھیں: حمزہ شہباز اور پرویز خٹک جلد نیب کی حوالات میں‌ہوں گے: چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال

بادشاہ ایڈورڈ، ملک کے دیگر اعلیٰ حکام اور چرچ کے بڑے پادری اس موقع پر موجود تھے۔ لوہے کو دہکا دیا گیا، جس کے اوپر سے ملکہ کو دو پادریوں کے ہمراہ اس لوہے کے اوپر سے گزرنا تھا۔ کہا جاتا ہے کہ ملکہ پادریوں کے ہمراہ اس لوہے کے اوپر سے بحفاظت گزر گئی اور اسے سرخ دہکتا ہوا لوہا ذرا بھی گرم محسوس نہیں ہوا تھا۔اس وقت کے مصوروں نے ملکہ کو دہکتے لوہے کے اوپر سے گزارے جانے کی تصاویر بنائی تھیں جو آج بھی محفوظ ہیں۔اس کے علاوہ معروف شاعر ولیم بلیک نے 1793ء میں ملکہ ایما کی اس مصیبت پر ایک نظم بھی لکھی جو بہت معروف ہوئی اور آج بھی برطانوی ادب میں‌ اہم درجہ رکھتی ہے.

یہ بھی پڑھیں: ایران بجلی اور ایل پی جی دینے کو تیار لیکن بدلے میں‌ پاکستان اسے کیا دے گا؟ تفصیل سامنے آ گئی

اپنا تبصرہ بھیجیں