پرویز مشرف کے ساتھیوں کے خلاف بھی کارروائی کا مطالبہ لیکن ان کے کتنے ساتھی آج عمران خان کی کابینہ میں شامل ہیں؟

پرویز مشرف کے ساتھیوں کے خلاف بھی کارروائی کا مطالبہ لیکن ان کے کتنے ساتھی آج عمران خان کی کابینہ میں شامل ہیں؟

اسلام آباد(بول پاکستان رپورٹ) خصوصی عدالت کی طرف سے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کو سنگین غداری کیس میں سزائے موت سنائے جانے کے بعد سے پرویز مشرف کے حامی برانگیختہ ہیں اور اکثر کی طرف سے مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ اگر پرویز مشرف غدار ہیں تو اس اقدام میں ان کا ساتھ دینے والے لوگ کیسے محب وطن ہو گئے۔

یہ بھی پڑھیں: لاہور میں‌ماڈلز اور اداکاراؤں کی برہنہ تصاویر اور ویڈیوز بنائے جانے کا انکشاف

ان لوگوں کا کہنا ہے کہ اگر پرویز مشرف کو غدار قرار دے کر سزائے موت سنائی جا سکتی ہے تو پھر ان کے ساتھیوں کے خلاف بھی کارروائی کی جائے اور سزائے سنائی جائیں کیونکہ وہ بھی اس اقدام میں ان کے ساتھ شریک تھے۔ یہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ پرویز مشرف کے ساتھی کون تھے اور ان میں سے کتنے آج بھی اقتدار کے مزے لوٹ رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: چینی شہری کو بیچی جانے والی پاکستانی دلہن کی دردناک کہانی، کس اذیت ناک موت سے دوچار ہوئی، سن کر رونگٹے کھڑے ہو جائیں

اس سوال کا جواب یہ ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی کابینہ کے 29 اراکین میں سے 15 وفاقی وزرراء اور وزرائے مملکت ایسے ہیں جن کا تعلق پرویز مشرف سے رہا ہے اور ان 15 لوگوں میں عمران خان کے مشیر اور معاونین خصوصی شامل نہیں ہیں۔ ان میں بھی کئی لوگ ایسے ہیں جو پرویز مشرف کے ساتھ رہے۔ اب اگر اس مذکورہ مطالبے پر عملدرآمد ہوتا ہے تو ملک میں کیسی ہڑبونگ مچے گی، اس کا اندازہ اس تعداد سے لگایا جا سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: آدمی کام سے لوٹا تو اپنی نوجوان بیوی کو ایسی شرمناک حالت میں‌دیکھ لیا کہ مشتعل ہو کر گولیاں برسا دیں

اپنا تبصرہ بھیجیں