اگر بھارت میں احتجاج آئندہ ہفتے تک جاری رہا تو کشمیر میں... بھارتی سکالر نے ہی مودی سرکار کی مذموم منصوبہ بندی کا بھانڈہ پھوڑ دیا

اگر بھارت میں احتجاج آئندہ ہفتے تک جاری رہا تو کشمیر میں… بھارتی سکالر نے ہی مودی سرکار کی مذموم منصوبہ بندی کا بھانڈہ پھوڑ دیا

نئی دہلی (بول پاکستان رپورٹ)بھارت میں مسلم مخالف شہریت ترمیمی بل منظور ہونے کے بعد سے شدید احتجاج جاری ہے اور ہر گزرتے دن کے ساتھ اس میں شدت آتی جا رہی ہے۔ کئی ریاستوں نے مودی سرکار کے منظور کردہ اس قانون کو ماننے سے انکار کر دیا ہے، چنانچہ موجودہ صورتحال کے پیش نظر یہ قانون مودی سرکار کے گلے کی ہڈی بنتا نظر آ رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:‌ پرویز مشرف کے ساتھیوں کے خلاف بھی کارروائی کا مطالبہ لیکن ان کے کتنے ساتھی آج عمران خان کی کابینہ میں شامل ہیں؟

اب اس صورتحال سے نکلنے کے لیے مودی سرکار کیا کرے گی؟ مودی سرکار کے ماضی کے چلن کو دیکھتے ہوئے خود ایک بھارتی سکالر نے ہی بھارت سرکار کی ایک مذموم منصوبہ بندی کا پردہ چاک کر دیا ہے۔ یہ سکالر اشوک سوائن ہیں جو سویڈن کی اپسلا یونیورسٹی اسسٹنٹ پروفیسر اور پیس اینڈ کنفلکٹ ریسرچ ڈیپارٹمنٹ کے شعبہ پروگرام آف انٹرنیشنل سٹڈیز کے ڈائریکٹر ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:‌ لاہور میں‌ماڈلز اور اداکاراؤں کی برہنہ تصاویر اور ویڈیوز بنائے جانے کا انکشاف

انہوں نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر مودی سرکار کی منصوبہ بندی کا بھانڈہ پھوڑتے ہوئے لکھا ہے کہ “اگر شہریت ترمیمی بل کے خلاف بھارت میں احتجاج اگلے ہفتے تک جاری رہتا ہے اور اس کا دائرہ پھیلتا ہے تو کشمیر میں ایک دہشت گردانہ حملہ کروایا جا سکتا ہے۔ اس حلے کے بعد مودی ایک بار پھر پاکستان کے ساتھ لفظوں کی جنگ میں مصروف ہو جائیں گے تاکہ بھاتی شہریوں کی توجہ اس متنازعہ قانون سے ہٹائی جا سکے۔”

یہ بھی پڑھیں:‌ اداکارہ نور کی 5 ویں خفیہ شادی کا معاملہ، اداکارہ خود میدان میں‌آ گئیں

اپنا تبصرہ بھیجیں